28

 رات سےنیب ترامیم کیخلاف عمران خان کی پٹیشن پڑھ رہاہوںتفصیلاً بتائیں  آئین سےکیسےمتصادم ہیں؟ چیف جسٹس آف پاکستان



 رات سےنیب ترامیم کیخلاف عمران خان کی پٹیشن پڑھ رہاہوں،تفصیلاً بتائیں  آئین …

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن ) سپریم کورٹ میں چیئرمین پاکستان تحریک انصاف عمران خان کی  نیب ترامیم کے خلاف پٹیشن پر سماعت ہوئی ، چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ   رات سےنیب ترامیم کیخلاف عمران خان کی پٹیشن پڑھ رہاہوں، تفصیل پیش کریں کہ کیسے یہ ترامیم  آئین سے  متصادم  ہیں؟۔

نجی ٹی وی دنیا نیوز کے مطابق  عمران خان کی  نیب ترامیم کے خلاف پٹیشن پر سماعت سپریم کورٹ میں ہوئی ، دوران سماعت چیف جسٹس نے ریمارکس دیے کہ  نیب ترامیم کوچیلنج کرنے پر مزید وضاحت کی ضرورت ہے، عوام کےکون سےبنیادی حقوق متاثرہورہےہیں؟نشاندہی کریں، یہ بتائیں کون سی ترامیم ایسی ہیں جن سےنیب قانون اورکیسزمتاثرہورہےہیں؟۔

جسٹس منصور علی شاہ نے ریمارکس دیے کہ  آپ کا کام ہمیں بتاناہےکون سی ترمیم بنیادی حقوق اورآئین سےمتصادم ہے،جسٹس اعجازالاحسن نے ریمارکس دیے کہ  کوئی ترمیم مخصوص ملزمان کوفائدہ پہنچانےکیلئےہےتووہ بتائیں،  کیاآپ چاہتےہیں عدالت پارلیمنٹ کوقانون میں بہتری لانےکاکہے۔

وکیل پاکستان تحریک انصاف نے دلائل میں کہا کہ  جوترامیم آئین سےمتصادم ہیں انہیں کالعدم قراردیاجائے،جسٹس منصورعلی شاہ نے ریمارکس دیے کہ  آپ نےلکھاہےترامیم پارلیمانی جمہوریت کےمنافی ہے،  آپ بتائیں کونسی ترمیم آئین کیخلاف ہے؟

چیف جسٹس آف پاکستان  جسٹس عمر عطا بندیال نے ریمارکس دیے کہ   آپ آئین کی اسلامی دفعات کاحوالہ دےرہےہیں، کرپشن یہ ہےآپ غیرقانونی کام کریں اوراس کاکسی کوفائدہ پہنچائیں،   کرپشن بنیادی طورپراختیارات کاناجائزاستعمال،خزانےکونقصان پہنچاناہے، احتساب گورننس اورحکومت چلانےکیلئےبہت ضروری ہے ۔جسٹس منصور علی شاہ نے ریمارکس دیے کہ ہماراکام یہ نہیں کہ آپ کودرخواست مزیدسخت بنانےکاکہیں۔اسلام آبادہائیکورٹ میں بھی ترامیم کیخلاف درخواست زیرسماعت ہے، کیامناسب نہیں ہوگاپہلےہائیکورٹ کوفیصلہ کرنےدیاجائے؟ ۔

وکیل پی ٹی آئی نے کہا کہ   نیب ترامیم کااطلاق پورےملک پرہوگا، نیب ترامیم کےبعدعوامی عہدیداراحتساب سےبالاترہوگئے، ابھی تک کسی اورہائیکورٹ میں درخواست نہیں آئی۔

جسٹس منصور علی شاہ نے ریمارکس دیے کہ  آرٹیکل 199 کی درخواست میں ہائیکورٹ بنیادی حقوق سےآگےنہیں جاسکتی، اگرحکومت نیب قانون ختم کردیتی توآپ کی درخواست کی بنیادکیاہوتی؟ کیاعدالت ختم کیاگیانیب قانون بحال کرسکتی ہے؟۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا کہ  وفاقی حکومت نےسینئروکیل کی خدمات حاصل کرنےکافیصلہ کیاہے۔ 

مزید :

اہم خبریں -قومی –




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں