31

بھارت میں منکی پاکس سے ہونے والی پہلی ہلاکت کی تصدیق ہوگئی



بھارت میں منکی پاکس سے ہونے والی پہلی ہلاکت کی تصدیق ہوگئی

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارت میں ’منکی پاکس‘ سے ہونے والی پہلی موت کی تصدیق کر دی گئی۔ الجزیرہ کے مطابق یہ ایشیاءمیں اس وائرس سے ہونے والی پہلی موت ہے۔ بھارت میں گزشتہ روز منکی پاکس کا ایک نیا مریض بھی سامنے آیا، جس سے ملک میں مریضوں کی مجموعی تعداد 6ہو گئی ہے۔ 

بھارتی حکومت کی طرف سے بتایا گیا ہے کہ منکی پاکس سے ریاست کیرالہ میں یکم اگست کو 22سالہ نوجوان کی موت ہوئی، جو کئی دن سے زیرعلاج تھا۔رپورٹ کے مطابق بھارت میں منکی پاکس کا پہلا کیس 15جولائی کو منظرعام پر آیا تھا۔ یہ 35سالہ شخص متحدہ عرب امارات سے بھارت پہنچا تھا اور گزشتہ روز ہلاک ہونے والا 22سالہ نوجوان بھی متحدہ عرب امارات سے ہی ملک واپس گیا تھا۔

جب یہ نوجوان بھارت واپس پہنچا تو اس کے جسم پر خارش جیسے سرخ نشانات نہیں تھے، جو اس مرض کی سب سے بڑی علامت قرار دیئے جا رہے ہیں۔یکم اگست کو منکی پوکس کا جونیا کیس رپورٹ ہوا، یہ شخص افریقی ملک نائیجیریا کا شہری ہے اور نئی دہلی میں مقیم ہے۔ اس نے حالیہ عرصے میں کسی دوسرے ملک کا سفر نہیں کیا۔ واضح رہے کہ یکم اگست تک دنیا بھر میں اس مریض میں مبتلا لوگوں کی تعداد 22ہزار 100سے تجاوز کر چکی ہے اور یہ بیماری 78ممالک میں پھیل چکی ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ یہ بیماری کورونا یا دیگر وباﺅں کی طرح تیزی سے نہیں پھیلتی۔ یہ صرف قریبی تعلقات اور خاص طور پر جسمانی تعلق کے نتیجے میں ایک سے دوسرے شخص کو منتقل ہوتی ہے۔ یہ چیچک اور خارش کے دانوں سے ملتی جلتی بیماری ہے۔ اس کی بڑی علامات میں بخار ہونا اور خارش ہونا شامل ہیں۔

مزید :

بین الاقوامی –




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں