15

   عاشق علی فرخ۔۔۔ہمارے شاہ جینویں برسی پر چند یادیں 



   عاشق علی فرخ۔۔۔ہمارے شاہ جی،نویں برسی پر چند یادیں 

 نامور صحافی، روزنامہ ”ایکسپریس“ ملتان کے سابق ریذیڈنٹ ایڈیٹر اور ہم سب کے ”شاہ جی“عاشق علی فرخ کو ہم سے بچھڑے نو برس بیت گئے۔ وہ 28 جولائی 2013 ء کی شام ملتان میں انتقال کر گئے تھے۔ بلا شبہ یہ صحافت کے ایک عہد کا خاتمہ تھا۔ 1962ء سے جولائی 2013ء  تک شاہ جی کا اوڑھنا بچھونا صحافت ہی رہا۔ ایک ایسی صحافت جو شرافت، متانت اور شائستگی سے عبارت تھی۔ ایک ایسی صحافت جو کاروبار نہیں مشن سمجھی جاتی تھی۔ شاہ جی ایسی ہی صحافت کی آخری نشانیوں میں سے تھے۔ یہ نشانیاں اب ختم ہوتی جا رہی ہیں۔۔ وہ ایک کارکن تھے اور ریذیڈنٹ ایڈیٹر کے عہدے تک پہنچ کر بھی کارکن ہی رہے۔

شاہ جی کی صحافتی خدمات کا عرصہ نصف صدی پر محیط تھا۔ ان پچاس برسوں کے دوران انہوں نے کئی نسلوں کی تربیت کی۔50 سالہ صحافتی کیریئر کے چالیس سال انہوں نے ”نوائے وقت“ کے لئے وقف کئے۔ لاہور میں کچھ عرصہ رپورٹنگ بھی کی لیکن پھر ان کے مزاج نے انہیں ڈیسک تک محدود کر دیا۔ ”نوائے وقت“ میں حمید نظامی کے انتقال کے بعد جب بیگم حمید نظامی کے ساتھ مجید نظامی کے اختلافات ہوئے تو عاشق علی فرخ اس ٹیم میں شامل تھے جس نے مجید نظامی کے ساتھ ”نوائے وقت“ سے الگ ہو کر ”ندائے ملت“ کا اجرا کیا تھا۔اس دوران بہت سی مالی مشکلات بھی آئیں۔ ظہور عالم شہید نے لاہور سے جب ”جاوداں“ کا اجرا کیا تو شاہ جی اس کی تاسیسی ٹیم میں بھی شامل تھے۔ ”نوائے وقت“ کے ساتھ مجید نظامی کے معاملات درست ہوئے تو شاہ جی اور ”ندائے ملت“ والی ٹیم کے اراکین واپس ”نوائے وقت“ میں آ گئے۔ جون 1978ء میں ”نوائے وقت“ ملتان کا اجراء ہوا تو شاہ جی اور قدرت اللہ چوہدری کا تبادلہ ملتان کر دیا گیا۔ یہ دونوں دوست اسی خیال سے ملتان آئے کہ کچھ عرصہ بعد واپس لاہور چلے جائیں گے۔ قدرت اللہ چوہدری صاحب نے تو ایسا ہی کیا اور کچھ عرصہ کی جلاوطنی کاٹنے کے بعد لاہور چلے گئے لیکن شاہ جی نے مستقل طور پر ملتان کو ہی اپنا مسکن بنا لیا۔ ”نوائے وقت“ سے طویل وابستگی کے بعد انہوں اپنی زندگی کا آخری دور روزنامہ ”ایکسپریس“ میں گزارا۔ شاہ جی جب 1978ء میں ملتان آئے تو یہاں روزنامہ ”امروز“ کئی برس سے واحد مقبول اخبار کے طور لوگوں کے دِلوں کی دھڑکن تھا۔ ”امروز“ اس سے قبل ملتان سے ”کوہستان،جسارت“ اور خود  ”نوائے وقت“ کا بستر بھی گول کر چکا تھا۔ اب ملتان سے  ”نوائے وقت“ کی اشاعت کا دوسرا دور تھا اور اس مرتبہ  ”نوائے وقت“ ملتان سے پسپائی اختیار نہیں کرنا چاہتا تھا۔  ”نوائے وقت“ ملتان میں شیخ ریاض پرویز ریذیڈنٹ ایڈیٹر کی حیثیت سے فرائض انجام دے رہے تھے۔جبار مفتی اور عبدالقادر یوسفی نے ابھی  اپنے صحافتی سفر کا آغاز کیا تھا،بشیر اصغر چوہدری، قاسم جعفری اور نصیر رعنا مختلف اخبارات کا سفر کرتے ہوئے نوائے وقت تک پہنچے تھے۔ ان میں سب سے سینئر شمس ملک صاحب تھے جو نیوز ایڈیٹر کے فرائض انجام دے رہے تھے۔ شاہ جی نے اس ماحول میں تیزی سے اپنی جگہ بنائی اور کچھ ہی عرصہ میں عملاًوہی نیوز ایڈیٹر کے فرائض انجام دینے لگے۔

شمس ملک صاحب ایک درویش منش انسان تھے۔ تمام تر صلاحیتوں کے باوجود وہ بہت سے معاملات سے صرفِ نظر بھی کر جاتے تھے۔ اس زمانے میں نوائے وقت میں کام کرنے والے دوست بتاتے ہیں کہ ملک صاحب رات کو کاپی روانہ کرنے کے بعد اور بسا اوقات کاپی کی تیاری کے دوران بھی آل انڈیا ریڈیو سے نشر ہونے والی قوالیوں کا پروگرام بہت شوق سے سنتے تھے۔قوالی ان پر ایسی کیفیت طاری کرتی کہ وہ دنیا و مافیہا سے بے خبر ہو جاتے۔ اس دوران بڑی سے بڑی خبر بھی ان کی توجہ اپنی جانب مبذول نہیں کرا سکتی تھی۔مارچ1981ء میں جب امریکی صدر رونالڈ ریگن پر قاتلانہ حملہ ہوا تو شمس ملک صاحب اس وقت بھی کسی قوالی پر سر دھن رہے تھے۔حملہ پاکستانی وقت کے مطابق رات گئے ہوا اور اس وقت تک تمام اخبارات اپنی کاپیاں پریس میں بھیج چکے تھے،  لیکن حملے کی خبر سنتے ہی سب نے کاپیاں واپس منگوائیں اورکچھ اخبارات نے شہ سرخیوں اور کچھ نے سٹاپ پریس کے طور پر  خبر شائع کر دی۔ملک صاحب البتہ حملے سے بے خبر قوالی میں مگن رہے۔اگلے روز ”نوائے وقت“ ملتان کے سوا تمام اخبارات میں ریگن پر حملے کی خبرموجود تھی۔ ریگن تو اس حملے میں بچ گئے مگر شمس ملک صاحب نہ بچ سکے۔پھر39سالہ عاشق علی فرخ کو  ”نوائے وقت“ ملتان کے نیوز ایڈیٹر کا چارج دے دیا گیا۔ ملک صاحب سے ان کا عہدہ تو واپس نہ لیا گیا وہ مرتے دم تک اسی عہدے پر فائز رہے لیکن ان کی حیثیت اب محض اعزازی نیوز ایڈیٹر کی ہو گئی تھی۔ ”نوائے وقت“ انتظامیہ اور خود عاشق صاحب نے بھی ان کی عزت اور تکریم میں کوئی فرق نہ آنے دیا۔ ان کی وفات کے بعد عاشق علی فرخ باضابطہ اس عہدے پر فائز کر دیئے گئے۔

عاشق صاحب کے ساتھ میری رفاقت 23 سال پر محیط تھی ان 23برسوں میں سے کم و بیش 12 سال تو ایسے ہیں جب مجھے روزانہ دس سے بارہ گھنٹے ان کے دائیں جانب بیٹھ کر کام کرنے کا اعزاز حاصل ہوا۔ اس دوران مجھے ان سے بہت کچھ سیکھنے کا موقع ملا۔ ان کے ساتھ مسلسل نظریاتی تصادم بھی رہا۔ وہ دائیں بازو کی سیاست کو پسند کرتے تھے اور قدرت کی ستم ظریفی دیکھئے کہ میں ان کے بائیں جانب بیٹھتا تھا اور خود کو شاہ جی کا بایاں بازو کہتا تھا۔ پھر بھی شاہ جی کو نظریاتی اختلاف کے باوجود بائیں بازو پر ہی اعتماد کرنا پڑتا تھا اور میں نے بھی کوشش کی کہ اُن کے اعتبار کو کبھی ٹھیس نہ پہنچے۔

1990ء کے عشرے میں قدرت اللہ چوہدری کی ادارت میں اسلام آباد سے روزنامہ ”پاکستان“ کا اجرا ہوا تو عاشق صاحب نے نیوز ایڈیٹر کے لئے میرا نام دے دیا  ”نوائے وقت“ سے کئی گنا زیادہ تنخواہ کی پیشکش تھی، لیکن میرے لئے ملتان چھوڑنا ممکن نہ تھا پھر شاہ جی نے ملتان سے علی شیر کو قدرت اللہ چوہدری کے سپرد کر دیا اور اسی اخبار سے ان کے صاحبزادے آصف علی فرخ بھی منسلک ہو گئے۔

شاہ جی کی زندگی کے آخری چند سال انتہائی اذیت میں گزرے لیکن انہوں نے اس اذیت کو بھی بہت خندہ پیشانی کے ساتھ برداشت کیا۔ انہیں ذیابیطس کا عارضہ تو ایک عرصے سے تھا۔ سگریٹ نوشی بھی بلا کی کرتے تھے اور رات گئے تک جاگنا بھی ان کا معمول تھا۔اچانک ایک روز معلوم ہوا کہ ان کے گردے فیل ہو گئے ہیں اور وہ ڈائیلسز پر چلے گئے ہیں۔ میں شاکر حسین شاکر کے ہمراہ ان کی عیادت کے لیے گیا تو وہ ہشاش بشاش تھے۔ہنستے  مسکراتے رہے۔اسی حالت میں انہوں نے طویل عرصہ گزارا، لیکن معمولاتِ زندگی میں فرق نہ آنے دیا۔وہ تقریبات میں بھی شریک ہوتے تھے۔پریس کلب بھی کبھی کبھارآتے تھے۔دفتر کے معمولات بھی جاری رکھنے کی کوشش کی۔ان کا یہ دور میرے لیے حیران کن تھا۔انہوں نے بیماری کوخود پرمسلط نہیں ہونے دیا۔ جولائی 2013ء کی شب نمازِ تراویح کے بعد ہم نے انہیں ملتان سے ہمیشہ کے لیے خدا حافظ کہا۔ایک ایمبولینس ان کے جسد خاکی کو ملتان سے لے کر قصور کے قصبے للیانی کی جانب روانہ ہو گئی اور یہ  وہی جگہ تھی جہاں سے انہوں نے زندگی کا سفر شروع کیا تھا۔

مزید :

رائے -کالم –




اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں